6 May, 2016 04:19


NADEEM MALIK LIVE

http://videos.samaa.tv/NadeemMalik/

05-MAY-2016

پاناما پیپرز کی ناکوائری میں ایف آئی اے کے بھیجتا تو کہا جاتا کہ یہ حکومتی اثر کے تحت ہو گی۔ آج کے واحد مہمان چوہدری نثار احمد کی ندیم ملک لائیو میں گفتگو

میں ایک قدم آگے بڑھا اور کہا کہ عمران خان ایف آئی اے کے کسی آفیسر کا نام بتایں میں پاناما پیپرز کی انکوائری اس کے حوالے کر دوں گا۔

جب تک کوئی ادارہ اتفاق راے سے انکوائری نہیں کرے گا اس میں کیڑے نکالے جایں گے اسے متنازع بنایا جائے گا۔

پاناما لیکس نے صاف طور پر کہا ہے کہ اس کی تفصیلات الزام ہیں ابھی یہ نہیں پتہ کہ جائیدادیں قانونی پیسے سے بنائی گئیں یا غیر قانونی پیسے سے۔

اپوزیشن نے پہلے کہا کہ ایف آئی اے پاناما لیکس کی انکوائری کرے پھر کہا پارلیمنٹ کرے اور پھر کہا سپریم کورٹ کرے ہم نے وہ سب کر دیا۔

اپوزیشن پاناما پیپرز کی انکوائری پر لیت و لعل سے کام لے رہی ہے اور اس کی وجہ سا معاملہ میں تاخیر ہو رہی ہے۔

ہم اپوزیشن کے ساتھ مل بیٹھ کو پاناما پیپرز کے مسئلے کا حل کی طرف جانے کے لئیے تیار ہیں۔

پاناما پیپرز کی تفصیلات بتانے کے لئیے شریف فیملی کو کوئی فورم چاہئیے اور سپریم کورٹ کے سامنے وہ سارے حقائق رکھیں گے۔

اپنی طرف سے کوئی تبصرہ نہیں کرنا چاہئیے سول اور ملٹری لیڈرشپ میں کوئی خلیج نہیں ہے۔

جنرل راحیل اور نواز شریف کی مصروفیات کی وجہ سے ملاقاتوں کا سلسلہ کچھ کم ہوا ہے جو پھر باقاعدہ ہو جائے گا۔

کرپشن اور ٹیرر فنانسنگ دو مختلف باتیں ہیں ان کو ایک دوسرے کے ساتھ نہیں جوڑا جا سکتا۔

وفاقی حکومت نے نیشنل ایکشن پلان کے تحت فوج کو ملک میں کہیں بھی سکیورٹی آپریشن کرنے کے اختیارات دئیے ہوئے ہیں۔

فوج پولیس اور رینجرز کے ساتھ مل کر کہیں بھی انٹیلی جنس کی بنیاد پر آپریشن کر سکتی ہے پچھلے دو سالوں میں چودہ ہزار آپریشن کئیے گئے ہیں۔

اایم کیو ایم کے کارکن کی ہلاکت پر صوبائی حکومت انکوائری کا حکم دے سکتی ہے وفاقی حکومت یہ کام نہیں کر سکتی۔

آرمی چیف نے رینجرز کے خلاف تحقیقات کرنے کا حکم دیا ہے۔

میں رینجرز سے باقاعدہ رپورٹ لیتا ہوں مسنگ پرسنز پر ان کے اور ایم کیو ایم کے نقطہ نظر میں بہت زیادہ تضاد ہے۔

کراچی آپریشن بہت اچھی طرح سے چل رہا ہتھا لیکن پچھلے دو تین ماہ میں کچھ مسائل پیدا ہوئے ہیں۔

آپریشن ضرب عضب تقریباْ مکمل ہو چکا ہے لیکن اسے سمیٹنے میں ابھی وقت لگے گا۔

ڈونل ٹرمپ پاکستان پر الزامات لگا رہے ہیں لیکن اس کے جواب میں ہمارا میڈیا متحرک ہے۔

پاکستان خطے میں اپنا مثبت کردار ادا کر رہا ہے لیکن ہوتا یہ ہے کہ غلطی کوئی بھی کرے خمیازہ پاکستان کو بھگتنا پڑتا ہے۔

پاکستان افغانستان میں امن کے لئیے اپنمی پوری کوشش کر رہا ہے۔

مولانا عبدالعزیز کے خلاف پچھلی حکومتوں میں تینتیس بہت ہی سنجیدہ قسم کے مقدمات تھے جن میں سے تئیس میں وہ بری ہو چکے ہیں۔

ہر کوئی مولانا عبدالعزیز کے متعلق ہم سے سوال کرتا ہے پچھلی حکومتوں سے کیوں نہیں پوچھتے۔

لال مسجد میں اس وقت ماضی کے سے حالات نہیں ہیں نہ وہاں اسلحہ ہے اور نہ عسکریت ہے۔

سرکاری زمینوں پر مدارس بنے ہوئے ہیں پچھلی حکومتوں نے انہیں بننے سے نہیں روکا۔

نیشنل ایکشن پلان وزارت داخلہ کے تحت چل رہا ہے اور وہی اس کے معاملات کو دیکھتی ہے۔