11 August, 2016 16:37


NADEEM MALIK LIVE

http://videos.samaa.tv/NadeemMalik/

11-AUGUST-2016

آج کوئٹہ کے واقع کے بعد بڑی میٹنگ ہوئی ہے چھوٹی چھوٹی میٹنگز ہوتی رہتی ہیں۔ طلال چوہدری کی ندیم ملک لائیو میں گفتگو

نیکٹا دو صبوں میں بن چکا ہے لیکن دو صوبوں نے ابھی تک نہیں بنایا اسے چاروں صوبوں میں بننا ہے۔ طلال چوہدری

حکومت نے نیکٹا کو ایک ارب بیس کروڑ روپے جاری کر دئیے ہیں۔ طلال چوہدری

کوئٹہ کا دہشت گردی کا واقع نیشنل ایکشن پلان کی ناکامی ہے کیونکہ اس پر پوری طرح عمل نہیں ہوا ہے۔ حامد خان

آپریشن ضرب عضب کا اس طرح مقابلہ کیا جا رہا ہے کہ ہائی پروفائل دھماکے ہو رہے ہیں۔ حامد خان

عام طور پر دہشت گردی کے واقع کے بعد مرنے والوں کی تعزیت کی جاتی ہے اور زخمیوں کی عیادت کی جاتی ہے اس کے بعد اس بھول جاتے ہیں۔ مرتضی وہاب

ہم مرکز کو بہت دفعہ تعاون کرنے کا کہہ چکے ہیں لیکن وہ اس کا کوئی جواب نہیں دیتا۔ مرتضی وہاب

ہم نے وفاقی حکومت کو نادرا کا ریکارڈ حاصل کرنے اور جی ایس این لوکیٹر دینے کا کہا ہے لیکن نہیں کیا گیا۔ مرتضی وہاب

حکومت ابھی تک دہشت گردی کے خلاف جنگ کو سمجھ نہیں سکی اسے وفاق نے آگے لے کر بڑھنا ہے۔ جنرل غلام مرتضی

بہت سے سخت فیصلے کرنے کی ضرورت ہے لیکن سیاسی مصلحتیں آڑے آ جاتی ہیں۔ جنرل غلام مرتضی

سیاسی قیادت نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں اپنی فورسز کا بھر پور ساتھ دیا ہے۔ طلال چوہدری

سندھ میں پولیس ریفارمز پر بڑی تیزی سے کام ہو رہا ہے اور اس کا ڈرافٹ تیار ہو چکا ہے۔ مرتضی وہاب

دہشت گردی کے خلاف جنگ لڑنے کے لئیے ہمیں اپنی خارجہ پالیسی پر نظر ثانی کرنے کی ضرورت ہے۔ جنرل غلام مرتضی

حکومت اپنے آپ کو بچانے میں لگی ہے اور عوام مر رہے ہیں۔ جنرل غلام مرتضی

گلی محلے میں دہشت گردی کے خلاف جنگ پولیس لڑتی ہے جسے اب تک تیار ہی نہیں کیا گیا۔ جنرل غلام مرتضی