10 October, 2016 16:29


NADEEM MALIK LIVE

http://videos.samaa.tv/NadeemMalik/

10-OCTOBER-2016

آج نواز شریف کے وکیل نے الیکشن کمشن میں کہا ہے کہ مریم نواز نواز شریف کی زیر کفالت نہیں ہیں۔ آج کے واحد مہمان عمران خان کی ندیم ملک لائیو میں گفتگو

ایسے لگتا ہے کہ نواز شریف نے الیکشن کمشن میں اپنے ڈاکیومینٹ تبدیل کر لئیے ہیں۔

میں نے پہلے ہی کہا تھا کہ ایف بی آر میں ریکارڈ کو تبدیل کیا جا رہا ہے۔

اسلام آباد میں ہم جلسہ نہیں کریں گے بلکہ تب تک بیٹھیں گے جب تک ہمیں انصاف نہیں ملے گا۔

اسلام آباد میں ٹیسٹ میچ نہیں ہو گا بلکہ ٹائم لیس میچ ہو گا اور رائے ونڈ سے چار گنا زیادہ لوگ آیں گے۔

جمہوریت میں صرف اپوزیشن ہی نہیں بلکہ حکمران جماعت بھی جمہوری عمل کی نگرانی کرتی ہے۔

مسلم لیگ ن والوں کو عوام کا نہیں نواز شریف کا مفاد عزیز ہے۔

پاکستان کی پارلیمنٹ میں کرپشن کا مافیا بیٹھا ہوا ہے۔

انصاف نہیں ملے گا تو سڑکوں پر آیں گے ضرورت ہوئی تو قومی اسمبلی اور کے پی کے اسمبلی سے استعفے بھی دیں گے۔

دبئی میں دو سالوں میں پاکستانیوں نے ساڑھے سات ارب ڈالر کی پراپرٹی خریدی ہے کسی ادارے نے کچھ نہیں کیا۔

ہم نے تمام سیاسی جماعتوں کو رائے ونڈ جلسے کی دعوت دی لیکن انہوں نے بہانہ کیا کہ نہیں آیں گے آپ نواز شریف کے گھر جا رہے ہیں۔

وزیراعظم پاناما لیکس میں رنگے ہاتھوں پکڑا گیا ہے اور پارلیمنٹ میں آ کر جھوٹ بولتا ہے۔

تیس اکتوبر میرے لئیے نہیں بلکہ پاکستان کے لئیے ڈیفائننگ مومنٹ ہو گا۔

پیپلز پارٹی ایک نظریاتی جماعت آصف زرداری کی وجہ سے ایک چھوٹی سی جماعت بن کر رہ گئی ہے۔

جن کو فکر ہے کہ نواز شریف کے بعد کرپشن میں ان کی باری بھی آجائے گی وہ اس کے ساتھ ملے ہوئے ہیں۔

میں احتساب کی بات کرتا ہوں تو مجھے کہا جاتا ہے کہ میں وزیراعظم بننا چاہتا ہوں یا سی پیک کے خلاف ہوں۔

صرف فوج ایک ادراہ ہے جسے نواز شریف تباہ نہیں کر سکا اور اس کے خلاف بہت خطرناک پالیسی پر چل رہا ہے۔

پاکستان کی فوج کو کمزور کرنے اور خطے میں بھارت کی بالا دستی قائم کرنے کی ایک عالمی سازش ہو رہی ہے۔

جو کچھ نواز شریف کر رہا ہے اس سے فوج کمزور ہو جائے گی۔

عالمی طاقتیں بلوچستان کو پاکستان سے علحیدہ کرنا چاہتی ہیں فوج ہی ہے جو وہاں کروائی کر رہی ہے۔

پنجاب پولیس چھوٹو گینگ کو نہیں پکڑ سکتی تو بڑے گینگز کو کیا پکڑے گی۔

پنجاب میں پولیس کو ٹھیک کریں یا پھر فوج کو کاروائی کرنے دیں۔

کالعدم جماعتوں کو ختم کرنے کے لیے تمام سیاسی جماعتیں نیشنل ایکشن پلان پر دستخط کر چکی ہیں۔

جو ملک دنیا میں خوشحال ہیں وہ اس لئیے ہیں کہ وہاں ادارے مظبوط ہیں۔

عالمی ادارے کے مطابق جمہوری دور میں پاکستان کے اداروں کی کارکردگی پہلے سے نیچے گئی ہے۔

عدالت پاناما لیکس پر اس لئیے سوو موٹو نوٹس نہیں لے رہی کیونکہ جیوڈیشری نواز شریف کے زیر اثر ہے۔

کسی ڈکٹیٹر نے اتنے بندے نہیں مارے جتنے مادل ٹاؤن میں مارے گئے ہیں اور کسی کے خلاف کوئی کاروائی نہیں ہوئی۔

یہ تاثر بن چکا ہے کہ پاکستان کی جیوڈیشری کا پیپلز پارٹی کے لئیے ایک معیار ہے اور نواز شریف کے لئیے دوسرا ہے۔

دس سال پہلے پاکستان کا قرضہ چھ ہزار ارب روپیہ تھا جو زرداری اور نواز شریف دور میں بائیس ہزار ارب روپے تک پہنچ چکا ہے۔

ہمارا انقلاب پر امن ہے اگر یہ کامیاب ن ہوا تو پھر خونی انقلاب آئے گا۔

پاکستان کی قوم اپنے حقوق کے لئیے باہر نہ نکلی تو پھر آگے ان کے لئیے صرف اندھیرا ہے۔

نواز شریف خود کو احتساب کے لئیے پیش کرے یا پھر استعفی دے۔

پاکستان کے عوام کو میرا پیغام ہے کہ کرپٹ مافیا کے خلاف باہر نکلیں نہیں تو پھر ان کے بچوں کی بھی غلامی کرنی پڑے گی۔